2,135

میاں صاحب پر یہ دن بھی آنا تھے ۔۔۔نواز شریف کو کوٹ لکھپت جیل میں کیا کام کرنے کے لیے دیا گیا؟ جان کر پوری ن لیگ افسردہ ہوجائے گی

لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک) سابق وزیراعظم نواز شریف کو کوٹ لکھپت جیل منتقل کر دیا گیا۔ جیل ذرائع کے مطابق نواز شریف کوکوٹ لکھپت جیل کی سکیورٹی وارڈ میں رکھا گیا ہے۔شہبازشریف بھی نواز شریف کےساتھ اسی سیکیورٹی وارڈ میں رہیں گے۔ذوالفقارعلی بھٹو اور آصف زرداری بھی اسی جیل میں قید کاٹ چکے ہیں۔

سکیورٹی وارڈ کے لان میں ذوالفقار علی بھٹواورآصف زرداری کےلگائے پودے بڑے ہو چکے ہیں۔سابق وزیراعظم نواز شریف کو بیس بائے بیس کا کمرہ الاٹ کیا گیا ہے۔ کوٹ لکھپت جیل پہنچنے پر نواز شریف کی تصویر اُتاری گئی۔حاضری رجسٹرپر نواز شریف کے دستخط کروائے گئے اور میڈیکل بھی کیا گیا۔حاضری رجسٹرپرجیل حکام نےلکھا نوازشریف قیدی با مشقت نہیں ہیں۔ حاضری رجسٹرپرلکھا گیا نوازشریف علم حاصل کریں گے یا پڑھائیں گے۔جیل میں نواز شریف کےکمرے سےملحقہ ایک کنال کالان بھی ہے۔یاد رہے کہ گذشتہ روزاحتساب عدالت نے سابق وزیر اعظم نواز شریف کو فلیگ شپ ریفرنس میں بری کر دیا جبکہ العزیزیہ ریفرنس میں مجرم قرار دیتے ہوئے سات سال قید بامشقت کی سزا سنائی ۔ نواز شریف پر 1.5 ملین پاؤنڈز اور 25 ملین ڈالرز کا الگ الگ جُرمانہ بھی عائد کیا گیا جبکہ نواز شریف کو دس سال تک عوامی عہدہ رکھنے کے لیے بھی نا اہل قرار دے دیا گیا۔عدالت نے نواز شریف کی جائیداد ضبطگی کا بھی حکم دیا۔ جس کے بعد نیب نے نواز شریف کو کمرہ عدالت سے گرفتار کر لیا تھا۔ اب سے کچھ دیر قبل نیب کی ٹیم خصوصی طیارے کے ذریعے سابق وزیراعظم نواز شریف کو لے کر لاہور پہنچی جہاں انہیں حج ٹرمینل سے کوٹ لکھپت جیل سے منتقل کیا گیا۔جیل ذرائع کا کہنا ہے کہ جیل میں ملاقات کے لیے جمعہ کا دن مختص ہے جس کے تحت خونی رشتہ دار اور شناختی کارڈ پاس ہونے والے افراد نواز شریف سے ملاقات کر سکیں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں